عن ابن عباس رضی اللہ عنھما قال قال رسول اللہﷺ ان للہ فی کل یوم و لیلۃ عشرین مائۃ رحمۃ تنزل علی ہذا البیت ستون للطائفین و اربعون للمصلین و عشرون للناظرین
(کذا فی الدر عن ابن عدی البیھقی ، فضائل حج ص 91)

 

حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنھما فرماتے ہیں کہ حضورﷺ نے ارشاد فرمایا اللہ تعالی کی طرف سے بیت اللہ پر ہر دن و رات میں ایک سو بیس (120) رحمتیں نازل ہوتی ہیں ساٹھ (60) طواف کرنے والوں کے لئے چالیس (40) نماز پڑھنے والوں کے لئے اور بیس (بیت اللہ کو)دیکھنے والوں کے لئے۔

اسی بنیاد پر علماء فرماتے ہیں کہ مسجد حرام میں طواف نفل نماز سے زیادہ فضیلت رکھتا ہے عام مسجد میں آدمی داخل ہو تو اس کے لئے سنت یہ ہے کہ وہ تحیۃ المسجد کی دو رکعات پڑھے لیکن جو آدمی مسجد حرام میں داخل ہو تو اس کو تحیۃ المسجد نہیں پڑھنی چاہیئے بلکہ پہلے طواف کرے اور پھر طواف کے شکرانے کے طور پر مقام ابراہیم علیہ السلام پر دو رکعات طواف کی توفیق ملنے کے شکرانے کے طور پر ادا کرے۔
راقم الحروف تبلیغ کے سلسلے میں سال میں چل رہا تھا اس دوران ایک دفعہ رائیونڈ میں مولانا جمیل صاحب بیان فرما رہے تھے انہوں نے اپنے بیان میں فرمایا کہ تین چیزوں کو صرف دیکھنا بھی ثواب ہے

  1. بیت اللہ کو (جیسا کہ اس حدیث میں آیا ہے کہ دیکھنے والے کو بھی بیس رحمتیں ملتی ہیں)
  2. والدین کو
  3. علماء کو

 

Please follow and like us:
0